23

اپنوں پہ کرم،غیروں پر ستم،دنیا دو رنگی،منگلا پولیس کی حراست میں مبینہ تشدد سے ہلاک ہونیوالے علی شان ولد عبدالرزاق کی انکوائری رپورٹ 28روز بعد بھی مکمل نہ ہو سکی

میرپور(شمعون ذیشان چوہدری)اپنوں پہ کرم،غیروں پر ستم،دنیا دو رنگی،منگلا پولیس کی حراست میں مبینہ تشدد سے ہلاک ہونیوالے علی شان ولد عبدالرزاق کی انکوائری رپورٹ 28روز بعد بھی مکمل نہ ہو سکی،قاتل آزاد معطلی پر ہی محکمہ پولیس کے بڑوں کا اکتفا مقتول علی شان کے لواحقین انصاف کیلئے دربدر کیا انساینت مر گئی؟پیٹی بھائی کے بچاؤ کیلئے معروضی حالات کو پس پشت ڈالنے کے نتائج کیا ہونگے تشدد کے واضح نشانات چھپانے اور موت کو طبعی بنیاد سے منسلک کرنے کے پیچھے کون سے عوامل کارفرما ہیں سنجیدہ حلقے سراپا سوال ایک ماہ کے لگ بھگ کا عرصہ گزرنے کے باوجود قتل کی تحقیقات کیلئے کوئی پیش رفت نہ ہونے پر ریاست کی رٹ چیلنج۔تفصیلات کیمطابق 5اگست کو منگلا پولیس کی حراست کے دوران پولیس کے مبینہ تشدد سے علی شان عرف شانو ولد عبدالرزاق ساکن محلہ آرائیاں جاتلاں کو منگلا پولیس نے اپنی حراست میں لیا بعدازاں 4اگست کو علی شان کی موت واقع ہوگئی جسے سرکاری اسپتال میرپور منتقل کیا گیا جہاں اس کی موت کی تصدیق ہو گئی اور اسپتال انتظامیہ کیمطابق علی شان کی موت واقع ہو چکی تھی مرنیوالے علی شان کے جسم اور ٹانگوں پر تشدد کے نشانات بھی واضح تھے موت کیسے ہوئی اس کیلئے انکوائری کمیٹی بنا دی گئی مگرایک ماہ کے لگ بھگ کا عرصہ گزرنے کے باوجود بھی تاحال رپورٹ سامنے نہ لائی جا سکی جبکہ مبینہ طور پر پولیس تشدد سے ہلاک ہونیوالے علی شان کے ورثاء انصاف کیلئے دربدر بھٹکنے پر مجبور ہو گئے،سنجیدہ حلقوں نے اس صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے واقعات کی انکوائری مکمل نہ کیا جانا باعث تشویش ہے ان حلقوں نے چیف سیکرٹری،آئی جی پولیس آزاد کشمیر سے مطالبہ کیا کہ واقع کا نوٹس لیں اور مقتول کے خاندان کو انصاف دلوانے کیلئے اقدامات اٹھائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں