12

گھر کو لگی آگ گھر کے چراغ سے اپنے ہی والد نے پیدا ہونے سے پہلے ہی مار ڈالا مظلوم خاتون شازیہ کا واویلہ

راولاکوٹ صدائے حق کشمیر نیوز گھر کو لگی آگ گھر کے چراغ سے اپنے ہی والد نے پیدا ہونے سے پہلے ہی مار ڈالا مظلوم خاتون شازیہ کا واویلہ ۔شازیہ دختر دولت خان نے اخبار ی نمائندوں کو اپنی روداد سناتے ہوئے کہا کہ ظفر خان ولد مسری خان جو لنجگراں کا رہائشی ہے کہ ساتھ میری شادی دس سال قبل ہوئی تھی میرے دو بچے ہیں لیکن آئے روز میرا خاوندظفر خان مجھ پر مظالم ڈھا رہا ہے لیکن میں بچوں کی خاطر خاموش رہی کسی کو کچھ نہیں بتایا نہ ہی مجھے خرچ دیتا ہے اشیائے خورد ونوش نہ ہونے کے برابر دیتا رہا کئی کئی روز میں نے فاقے بھی کاٹے بیمار ہو جائوں تو مجھے اسپتال لے جانا دور کی بات کبھی دوائی گولی بھی نہیں دیتا تھا پڑوسیوں سے کبھی دوائی وغیرہ ملتی تو کھا کر گزارا کرتی رہی لیکن اس بار ظلم کی انتہا ہو گئی میں اٹھارہ ہفتے کی حاملہ تھی میرے پیٹ میں بچہ تھا تو میرے شوہر نے مجھے تشدد کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں میرا وہ بچہ جو ابھی پیدا ہی نہیں ہوا تھا پیٹ میں ہی اس کی لاتیں لگنے سے جاں بحق ہو گیا اس پر مجھے جب بہت تکلیف ہوئی تو میں بستر مرگ پر پڑی تھی چار روز سے بھوکی پیاسی ایک روز میںصبح چھپ کر بچوں کی شفٹ والی گاڑی پر اسپتال آئی وہاں پر میں نے فون کر کے اپنے بھائی کو بلوایاجو آکر مجھے تھانے میں لے گیا میں ڈی ایس پی ظفر کے پاس پیش ہوئی انہوں نے مجھے دیکھا اور ایس ایچ او اعجاز خان اور چوکی آفیسر کے حوالے کیا انہوں نے میری مدد کی اور مجھے اسپتال میں داخل کروایا جہاں میرے مردہ بچے کی ولادت ہوئی جس کی  پولیس نے اپنی تحویل میںرکھ کر پولیس نے ظفر کے بھائی کے حوالے کیا  پولیس آفیسران کی شکر گزار ہوںجنہوں نے میری جان بچائی اور ارباب اختیار سے اپیل کرتی ہوں کہ مجھے انصاف دلایا جائے  #
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں